اسلام آباد میں بھی ویکسین کی قلت، نئی کھیپ 20 جون کو پہنچے گی

ملک کے دیگر حصوں کے علاوہ اسلام آباد میں بھی کورونا وائرس کی ویکسین کی قلت پیدا ہو گئی ہے۔
اسلام آباد کے کئی  ویکسینیشن مراکز سے شکایات آ رہی ہیں کہ وہاں شہریوں کو ویکسین کی پہلی خوراک نہیں لگائی جا رہی جبکہ  سنگل ڈوز ویکسین کین سائنو بھی نہیں مل رہی۔
اس حوالے سے اردو نیوز سے بات کرتے ہوئے ڈی ایچ او اسلام آباد ڈاکٹر ضعیم ضیا نے تصدیق کی کہ کچھ مراکز میں ویکیسن کا سٹاک ختم ہو گیا تھا جسے اب مرکزی آفس سے بھیجا جا رہا ہے۔
مزید پڑھیں
ان کا کہنا تھا کہ شروع میں اسلام آباد میں ویکیسن کے لیے آنے والے افراد کی اوسط تعداد تقریبا 10 ہزار کے لگ بھگ تھی جبکہ گزشتہ چند دنوں سے یہ بڑھ کر 20 ہزار تک ہو گئی ہے جس میں اسلام آباد کے ارد گرد کے اضلاع کے لوگوں کی بڑی تعداد بھی شامل ہے۔
’اس اوسط کو دیکھیں تو گزشتہ پانچ دنوں میں ہی ویکسین کی ایک لاکھ خواراکیں استعمال ہو گئی ہیں۔‘
تاہم ان کا کہنا تھا کہ تشویش کی بات نہیں ہے کل کا گزارا ہو جائے گا جبکہ پرسوں چھٹی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ 20 مارچ کو ویکیسن کی ایک اور کھیپ پاکستان میں پہنچ جائے گی۔
ایک سوال پر انہوں نے بتایا کہ اس وقت اسلام آباد کے ویکیسن سنٹرز میں ایسٹرا زینیکا ویکسین موجود ہے۔ ایسٹرا زینیکا لگوانے کے لیے شہریوں کو رضامندی فارم بھرنا پڑتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت انتظامیہ کی ترجیح ہے کہ سائنو فارم اور سائنو ویک کی دوسری خوراک لوگوں کو پہلے مہیا کر دی جائے۔

این سی او سی کے  مطابق 18 جون تک ملک میں ایک کروڑ 20 لاکھ افراد کو ویکیسن لگوائی جا چکی ہے۔ (فوٹو: اے ایف پی)
مقامی میڈیا کے مطابق پنجاب، سندھ کے علاوہ ملک کے دیگر علاقوں میں بھی ویکیسن کی قلت کی شکایت سامنے آئی ہے۔ پنجاب میں بھی ویکیسین لگوانے کا عمل ایک دو دن کے لیے رکنے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔
تاہم این سی او سی حکام نے اردو نیوز کو بتایا کہ ملک میں ویکسین کی قلت کا زیادہ مسئلہ نہیں البتہ سپلائی لائن کے کچھ مسائل ہیں جن پر قابو پایا جا رہا ہے۔
این سی او سی کے ٹویٹر اکاونٹ کے مطابق اٹھارہ جون تک ملک میں ایک کروڑ 20 لاکھ افراد کو ویکیسن لگوائی جا چکی ہے۔ سترہ جون کو دو لاکھ 67 ہزار افراد کو ویکیسن لگائی گئی۔
ملک بھر میں 18 جون کو کل کورونا کیسز 1043 کیسز سامنے آئے جبکہ 39 اموات رپورٹ ہوئیں۔ ملک میں کورونا مثبت آنے کی شرح ایک اعشاریہ نو فیصد تک ہے۔

نئی ویکسین کی خریداری کا معاہدہ

دوسری طرف مقامی میڈیا کے مطابق پاکستان نے چین سے بڑی مقدار میں کورونا ویکسین کی خریداری کا معاہدہ کر لیا ہے جس کے تحت دو کروڑ 75 لاکھ سے زائد خوراکیں خریدی جائے گی جس میں سائینوفارم، سائینوویک اور کین سائنو شامل ہیں۔
ڈی ایچ او اسلام آباد نے بھی اردو نیوز سے بات کرتے ہوئے نئی ویکسین کی خریداری کی تصدیق کی۔ مقامی میڈیا کے مطابق چینی کمپنیوں سے خام مال اور تیار کورونا ویکسین کی خریداری کی جا رہی ہے۔
سائینو فارم کی دو کروڑ 30 لاکھ خوراکوں کی خریداری کا معاہدہ کیا گیا ہے جس کے تحت سائنوفارم پاکستان کو دسمبر تک مرحلہ وار ویکسین فراہم کرے گی۔ اسی طرح کین سائنو سے 20 لاکھ سے زائد تیار ویکسین اور خام مال کا معاہدہ طے پایا ہے۔
یاد رہے کہ پاکستان میں اقتصادی رابطہ کمیٹی نے 9 جون کو 70 لاکھ افراد کو کورونا وائرس کی ویکسین لگانے کے لیے ایک ارب ڈالر ویکسین لاگت سے ویکیسن خریدنے کی منظور دی تھی۔