افغانستان کا 85 فیصد کنٹرول سنبھال لیا،طالبان

افغان طالبان کی ماسکو میں پریس کانفرنس

Your browser does not support the video tag.

افغان طالبان نے دعویٰ کیا ہے کہ انہوں نے افغانستان کے 85 فيصد حصے پر اپنا کنٹرول سنھال لیا ہے۔

ماسکو ميں افغان طالبان وفد کی ایک پريس کانفرنس کے دوران ایک رہنما شہاب الدين دلاور نے کہا کہ افغانستان ہمارے کنٹرول ميں ہے اور ہم اس پوزیشن میں ہیں کہ 15 روزميں پورے افغانستان کا کنٹرول سنبھال سکتے ہيں۔شہاب الدين دلاور نے کہا کہ ہم چاہتے ہيں کہ نئی افغان حکومت ميں سارے افغان اپنی اہليت اور قابليت کی بنياد پرکردار ادا کريں گے۔اس موقع پر افغان طالبان کے ترجمان سہیل شاہین نے واضح کیا کہ افغانستان کی سرزمين کسی ملک کے خلاف استعمال نہيں ہونے دی جائے گی۔دوسری جانب انگلينڈ ميں مائيں اپنے پياروں کو ياد کرکے آنسو بہارہی ہيں بی بی بی سی سے گفتگو ميں ايک فوجی کی ماں لوسی ايلڈريج نے کہا کہ ان کا بيٹا افغان جنگ ميں مارا گيا اب ساری زندگی درد کے ساتھ جينا ہوگا۔لوسی ايلڈريج نے افغانستان میں برطانیہ کے 450 فوجیوں کی موت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یہ شاید گنتی میں کم لگتے ہوں لیکن انہوں نے اپنا بیٹا اسی گنتی میں کھویا ہے۔ميرے ليے سب سے تکليف دہ بات يہ ہے کہ مجھ سے جھوٹ بولا گيا ميں محسوس کرتی ہوں کہ ميرے بيٹے سے بھی جھوٹ بولا گيا کیوں کہ افغانستان میں جنگ کا کوئی واضح مقصد نہیں تھا اور نہ ہی واپسی کی کوئی حکمت عملی طے تھی۔انہوں نے سوال کیا کہ ہم نے بيٹے ايک ايسی جنگ ميں کيوں کھوئے کہ جس جنگ کا کچھ حاصل نہیں تھا۔

متعلقہ خبریں