امریکی فضائیہ کا عراق، شام سرحد پرحملہ، 17افراد ہلاک

فوٹو: دی گارڈین

امریکی فضائیہ کی جانب سے عراق اور شام سے متصل سرحد پر حملے کے نتیجے میں 17افراد ہلاک ہوگئے۔

وال اسٹریٹ جنرل کی رپورٹ کے مطابق پینٹاگون نے اپنے جاری کردہ اعلامیے میں کہا ہے کہ عراق اور شام میں ایران کی حمایت یافتہ ملیثیا کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا۔ جس میں ایران کی پشت پناہی میں سرگرم ملیشیا کے ٹھکانوں سے عراق میں امریکی فوجیوں اور اڈوں پر ڈرون حملے کیے جارہے تھے۔

پینٹاگون نے اپنے اعلامیے میں عراق اور شام سرحد پر ہلاکتوں کی تصدیق نہیں کی گئی۔

غیرملکی خبررساں ایجنسی کا کہنا ہے کہ شام کی انسانی حقوق کی تنظیم آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کے حوالے سے بتایا ہے کہ شام پر کیے گئے امریکی حملوں میں کم از کم 17 ایران نواز جنگجو مارے گئے ہیں۔

شام کی انسانی حقوق کی تنظیم کے مطابق امریکی حملوں میں ہتھیاروں سے لیس تین گاڑیوں کو نشانہ بنایا گیا تھا۔

پینٹاگون کے مطابق امریکی صدر جوبائیڈن کے حکم پر ایران کی حمایت یافتہ ملیثیا کے تین ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا اور تنظیم کے آپریشنل اور ہتھیاروں کو ذخیرہ کرنے والے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا۔

پیںٹاگون کے مطابق صدر بائیڈن پہلے ہی واضح  کرچکے ہیں کہ وہ عراق میں تعینات امریکی اہلکاروں کی حفاظت کو ہر صورت یقینی بنائیں گے۔

جو بائیڈن کی جانب سے اقتدار سنبھالنے کے بعد امریکا کا عراق میں ایران کی حمایت یافتہ ملیشیا کے خلاف یہ دوسرا حملہ ہے۔

حالیہ مہینوں میں عراق میں تعیانت امریکی افواج  کو متعدد بار ڈرون حملوں سے نشانہ بنایا گیا ہے۔ امریکہ ایران کو ان حملوں کا ذمہ دار قرار دے رہا ہے تاہم ایران ان حملوں سے مکمل لاتعلقی کا اظہار کرچکا ہے۔

متعلقہ خبریں

امریکی فضائیہ، جو بائیڈن، پینٹاگون، عراق، شام