بلوچستان:سرکاری اراضی کی فروخت،سابق سٹی ناطم ومیئر کیخلاف ریفرنس دائر

NAB Balochistan

فوٹو: نیب بلوچستان فیس بک

نیب بلوچستان نے سرکاری اراضی کوڑیوں کے بھاؤ فروخت کرنے پر سابق سٹی ناظم اور میئر سمیت چار ملزمان کے خلاف ریفرنس احتساب عدالت میں دائر کر دیا۔

ترجمان نیب بلوچستان کے مطابق چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال کی منظوری سے کوئٹہ کے وسط میں واقع کوئٹہ میٹروپولیٹن کارپوریشن کی انتہائی قیمتی سرکاری اراضی کی غیر قانونی لیز کی تحقیقات کی گئیں۔

تحتقیقات میں انکشاف ہوا کہ سابق سٹی ناظم کوئٹہ مقبول لہڑی نے بلوچستان لوکل گورنمنٹ آرڈیننس2001 اور بلوچستان لوکل کونسل پراپرٹی رولز کے برخلاف 5292اسکوائر فٹ رقبے پر محیط سرکاری قیمتی زمین بغیر کسی نیلامی کے عمل اور ضروری قانونی طریقے کار کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے عظیم الدین نامی شخص کو اونے پونے داموں لیز پر دی۔

اس کے بعد میئر کوئٹہ ڈاکٹر کلیم اللہ نے زمین کے رقبے میں مزید اضافہ کرتے ہوئے عتیق الرحمن نامی ایک اور پرائیوٹ شخص کو غیر قانونی طور پر مذکورہ سرکاری اراضی انتہاہی کم قیمت میں الاٹ کر دی، غیر قانونی طور پر الاٹ کی گئی اراضی کی موجودہ مالیت 50کروڑ روپے سے زائد ہے۔

نیب بلوچستان نے ڈی جی نیب بلوچستان کی سربراہی میں سرکاری اراضی کی تحقیقات مکمل کرکے آج ریفرنس احتساب عدالت کوئٹہ میں جمع کرا دیا ہے۔