تکنیکی طورپر پاکستان کو وائٹ لسٹ میں ہونا چاہیئے، وزیرخارجہ

گرے لسٹ سے نکلنے کیلئے 14قوانین میں ترامیم کیں

وزير خارجہ شاہ محمود قريشی کا کہنا ہے کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (فیٹف) تکنیکی فورم ہے لہٰذا پاکستان کو گرے لسٹ کے بجائے وائٹ لسٹ ميں ہونا چاہیئے۔

ملتان میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ فيٹف ارکان اور دنيا کو فيصلہ کرنا ہوگا کہ يہ فورم تکنیکی ہے يا سیاسی کیونکہ بھارت سياسی طور پر کوشش کرتا رہا ہے کہ پاکستان گرے لسٹ سے نہ نکل سکے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے کا کوئی جواز موجود نہیں اور اُمید ہے کہ پاکستان بہت جلد گرے لسٹ سے نکل آئے گا۔

وزیر خارجہ شاہ محمود نے کہا کہ پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالنے کے لیے 14قوانین میں ترامیم کیں۔ فیٹف کے 27 میں 26نکات پر عمل درآمد کر چکے ہیں لیکن فیٹف نے کہا کہ 27نکات پر عمل کیا تو وائٹ لسٹ میں جا سکتے ہیں۔

ترقیاتی کام سے متعلق شاہ محمود قریشی نے کہا کہ جنوبی پنجاب کا پیسہ صرف جنوبی پنجاب پر ہی خرچ ہوگا اور جنوبی پنجاب کے لیے 189ارب روپے مالیت کا ترقیاتی پروگرام ہے۔

پی ٹی آئی رہنما کا کہنا تھا کہ جنوبی پنجاب کے لیے پہلی مرتبہ الگ ترقیاتی پروگرام لائے ہیں جبکہ پسماندہ علاقوں کی ترقی حکومتی ترجیحات میں شامل ہے۔ ملتان شہر کے ماسٹر پلان پر کام جاری ہے۔

واضح رہے کہ کچھ روز قبل فیٹف نے 26نکات پر عملدرآمد کرنے کے باوجود پاکستان کو گرے لسٹ میں برقرار رکھا ہے۔

متعلقہ خبریں

Pakistan grey list mein barqrar, Pakistan grey list, FATF ki grey list, India ki politics