جسٹس فائز عیسیٰ کیخلاف دائر نئی درخواستیں اعتراض کیساتھ واپس

Justice Faiz Isa

فائل فوٹو

جسٹس فائز عیسیٰ کے خلاف حکومت کی اصلاح طلب نظر ثانی درخواستیں سپریم کورٹ کے رجسٹرار آفس نے اعتراض عائد کرکے واپس کر دیں۔

وفاقی وزارت قانون نے اعلان کیا ہے کہ اعتراضات دور کرکے کیوریٹو نظرثانی درخواستیں ایک مرتبہ پھر دائر کی جائیں گی۔

رجسٹرار نے اعتراض لگایا کہ ایک کیس میں دو مرتبہ نظرثانی نہیں ہوسکتی۔ کیوریٹو نظرثانی درخواستوں کی سپریم کورٹ رولز اجازت ہی نہیں دیتے۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کیخلاف دائر ریفرنس کالعدم

کیوریٹو یعنی اصلاح طلب نظرثانی درخواستیں صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی، وزیراعظم عمران خان اور وزیر قانون فروغ نسیم، شہزاد اکبر اور ایف بی آر نے دائر کی تھیں۔

حکومت نے جسٹس قاضی فائز عیسٰی کے خلاف پہلے ریفرنس دائر کیا تھا جسے سپریم کورٹ نے کالعدم قرار دیا لیکن ساتھ ہی  ٹیکس معاملات ایف بی آر کو بھیجنے کا حکم دیا تھا۔

اس حکم کے خلاف جسٹس قاضی فائز عیسٰی اور ان کی اہلیہ نے نظر ثانی درخواستیں دائر کیں جو سپریم کورٹ نے منظور کرلی تھیں جس کے نتیجے میں ان کے خلاف ہونے والی ایف بی آر کی کارروائی، تحقیقات اور رپورٹ کالعدم قرار دے دی گئی تھی۔

متعلقہ خبریں