حلیم عادل کیساتھ سانپ والا معاملہ ڈرامہ لگتا ہے،غنی

حلیم عادل شیخ کو پٹیاں بھی جعلی لگی ہیں

وزیر تعلیم سندھ سعید غنی کا کہنا ہے کہ حلیم عادل شیخ سستی شہرت کیلئے کچھ بھی کرسکتے ہیں۔ سانپ والا معاملہ بھی ڈرامہ لگتا ہے۔ جیل میں بیماری کا بہانا بنایا اور اسپتال میں پارری کی۔

کراچی میں پریس کانفرنس سے خطاب میں صوبائی وزیر تعلیم سعید غنی کا کہنا تھا کہ حلیم عادل شیخ کو گرفتاری کے بعد سی آئی اے سینٹر منتقل کیا گیا۔ وہاں حلیم عادل کے ملنے جلنے پر کوئی پابندی نہیں تھی۔ ان کے نوکر چاکر بھی وہاں آتے جاتے تھے۔ کوئی ملنے کیلئے آنے والا اپنے سانپ ساتھ لے آیا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ حلیم عادل کا سانپ والا بھی کوئی ڈرامہ لگتا ہے۔ حلیم عادل سستی شہرت حاصل کرنے کیلئے کچھ بھی کرسکتے ہیں۔

تجاوزات سے متعلق آپریشن پر بات کرتے ہوئے صوبائی وزیر کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ کے حکم پر تجاوزات کے خلاف آپریشن کیا گیا۔ اسی آپریشن میں غیر قانونی فارم ہاؤس گرانے کا واقعہ ہوا۔ انہوں نے قانونی کارروائی کے دوران مداخلت کی اور اسے روکنا چاہا۔

ضمنی انتخاب سے متعلق سعید غنی کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن کی جانب سے واضح ہدایت تھی کہ ضمنی انتخاب کے روز کوئی رہنما حلقے میں جانے کا مجاز نہیں ہوگا۔ ہمارا کوئی وزیر وہاں نہیں گیا، جب کہ پی ٹی آئی کے رہنما وہاں موجود تھے۔

حلیم عادل شیخ پر تنقید کرتے ہوئے سعید غنی کا کہنا تھا کہ یہ اپنی پٹیاں کھلوا لیں تو اندازہ ہوجائے گا کہ انہیں زخم لگے ہیں یا نہیں۔ ہمیں اگر انتقامی کارروائی کرنی ہوتی تو پہلے کرچکے ہوتے، مگر یہ ہمارا وطیرہ نہیں۔ ان پر دہشت گردی کا مقدمہ چل رہا ہے، انہیں پولیس کی تحویل میں ہونا چاہیئے تھا، مگر ان کی ڈرامہ بازی ختم نہ ہوئی، جیل میں بیماری کا ڈرامہ کیا، جیل سے اسپتال گئے تو سالگرہ منانے لگے، ایسا لگا وہاں پارری ہو رہی ہے۔

متعلقہ خبریں