خانہ کعبہ کی خدمت پر 38 سال سے مامور پاکستانی

پاکستان سے 1983ء میں شاہ فہد بن عبدالعزیز کے دور میں سعودی عرب جانیوالے 23 سالہ احمد خان قندل نے کبھی سوچا بھی نہیں ہوگا کہ وہ تقریباً 40 سال تک خانہ کعبہ کی خدمت پر مامور رہیں گے۔

احمد خان آج اپنی زندگی کے 61 ویں سال میں ہیں اور خانہ کعبہ میں سینی ٹیشن سپروائزر کے طور پر خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔

فیس بک پر حرمین آرکائیو کی جانب سے ایک پوسٹ کے مطابق احمد اپنے سعودی عرب میں قیام کے دوران پیش آنیوالے کئی واقعات کے شاہد ہیں، جس میں مسجد الحرام کی شاہ فہد اور شاہ عبداللہ کے ادوار میں ہونیوالے توسیعی منصوبے اور خانہ کعبہ کا 1996ء کا بحالی منصوبہ قابل ذکر ہیں۔

احمد خان قندل کا کہنا ہے کہ جب میں کسی سے ملتا ہوں تو وہ شخص مجھے حرم میں خدمات انجام دینے اور وہاں دعا کرنے کے باعث انتہائی خوش نصیب تصور کرتا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ میں ہمیشہ خانہ کعبہ کے قریب رہتا اور یہ میرے لئے کسی اعزاز سے کم نہیں، مجھے چار دہائیوں تک یہ اعزاز ملنا بڑی سعادت ہے۔

احمد شاہ فہد کے دور میں خانہ کعبہ کی بحالی کے منصوبے کے بھی شاہد ہیں، وہ اسے اپنی زندگی کے اہم اور خوبصورت مواقع سے تعبیر کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ خوشی، محبت، ہم آہنگی، رواداری، رحم اور امن مسجد الحرام کے ہر کونے میں پایا جاسکتا ہے، جہاں دنیا بھر سے مسلمان اللہ کی حمد و ثناء کیلئے آتے ہیں۔

تازہ ترین

پاکستان میں 40فیصد تعلیم یافتہ خواتین بیروزگار ہیں، رپورٹ
جرمنی: کرسچن ڈيموکريٹک پارٹی کے طویل اقتدار کا خاتمہ
وزیرخزانہ کا آئی ایم ایف پروگرام جاری رکھنے کاعزم
شہبازشریف،سلیمان شہباز کی بریت کی خبر غلط ہے، شہزاداکبر