داسو واقعے کی اعلیٰ سطح پرتحقیقات جلد مکمل کرلیں گے،شیخ رشید

وزیر داخلہ شیخ رشید سے چینی وزیر پبلک سکیورٹی نے ٹیلی فونک رابطہ کیا ہے جس میں داسو بس حادثے کی تحقیقات جلد از جلد مکمل کرنے پراتفاق ہوا ہے۔

پاکستان اور چین نے اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ کوئی بھی شرپسند طاقت پاک چین تعلقات خراب نہیں کرسکتی ہے۔وزیر داخلہ شیخ رشید اورچینی وزیر پبلک سکیورٹی کے درمیان ٹیلی فونک گفتگو آدھے گھنٹے سے زائد جاری رہی۔

شیخ رشید نے داسو ہائیڈرو پاور بس حادثے پر اظہار کا افسوس کیا اور کہا کہ پاکستان اور چین آزمودہ دوست اور آہنی بھائی ہیں۔انھوں نے بتایا کہ  وزیراعظم کی ہدایت پر بس حادثے کی تحقیقات اعلیٰ سطح پر جاری ہیں اور بہت جلد تحقیقات مکمل کرلیں گے۔ وزیرداخلہ نے چینی وزیرکو یقین دلایا کہ چینی تحقیقاتی ٹیم کو مکمل تعاون فراہم کررہے ہیں اورپاکستان میں کام کرنے والے تمام چینی ورکرز کو فول پروف سیکیورٹی دیں گے۔

داسو بس حادثہ میں چینی باشندوں کی ہلاکت کا واقعے کی تحقیقات کے لیےچین کی اعلیٰ سطح تحقیقاتی ٹیم اسلام آباد پہنچ گئی ہے اور آج داسو کا دورہ کرے گی۔ چینی ماہرین حادثے کے حقائق جاننےکیلئے جائے وقوعہ بھی جائیں گے۔ چینی ٹیم کو پاکستانی سیکیورٹی حکام کی طرف سے بریفنگ بھی دی جائے گی۔

وزیراعظم عمران خان نے چینی ہم منصب سے ٹيليفونک رابطہ کیا اور داسو واقعے میں چینی شہریوں کی ہلاکت پر اظہارِافسوس کیا۔ عمران خان نے کہا کہ پاکستانی عوام سوگوار خاندانوں کے غم میں برابر کے شریک ہيں۔ واقعے میں زخمی چینی شہریوں کو بہترین طبی امداد فراہم کی جارہی ہے اورواقعے کی مکمل اور تمام پہلوؤں سے تحقیقات کی جارہی ہیں۔

وزیراعظم نے یقین دلایا کہ چینی شہریوں، منصوبوں اور اداروں کی حفاظت اولین ترجیح ہے۔ دشمن قوتوں کو برادرانہ تعلقات کو نقصان پہنچانے کی اجازت نہیں دیںگے۔

جمعرات کو پاکستان نے اپرکوہستان میں چینی انجینئرز کی بس پر حملے کے لیے بارودی مواد استعمال ہونے کی تصدیق کردی۔وزیراطلاعات فواد چوہدری نے ٹویٹ کرتے ہوئے بتایا کہ اپرکوہستان میں چینی انجینئرز کی بس پر حملے کی ابتدائی تحقیقات میں بارودی مواد استعمال ہوا ہے۔

 داسو واقعے میں دہشت گردی کا پہلو مسترد نہیں کیا جاسکتا ہے۔ اس معاملے پر وزیراعظم خود تمام پیش رفت کی نگرانی کررہے ہیں۔ اس کے علاوہ حکومت پاکستان چینی سفارت خانے کے ساتھ مسلسل رابطےمیں ہے۔ چین کے ساتھ مل کرپاکستان دہشت گردی کے خاتمے کیلئے پُرعزم ہے۔

بدھ کی صبح اپرکوہستان میں بس میں دھماکے سے 9 چینی شہریوں سمیت 13 افراد جاں بحق ہوگئے تھے۔ واقعے میں 28 چینی شہری زخمی بھی ہوئے۔

غیر ملکی خبررساں ادارے کےمطابق  بدھ کی صبح داسو ڈیم پر کام کرنے والے کمپنی کی گاڑی کے انجن میں دھماکے کے بعد آگ لگ گئی اور گاڑی سڑک کنارے سے کھائی میں جاگری۔ واقعے میں 9 چینی ورکرز سمیت 13 افراد جاں بحق ہوگئے جبکہ گاڑی میں سوار دیگر 28 چینی شہری زخمی بھی ہوئے۔

پاکستان میں چینی سفارت خانے نے بھی واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ چینی فرم کے ایک پروجیکٹ پر کام کرنے والے ورکرز کی گاڑی پر حملہ ہوا جس میں چینی شہریوں کی اموات ہوئی ہیں۔

چینی وزارت خارجہ کے ترجمان ژہاؤ لی جیان نے پاکستان پر زور دیا  کہ چینی گاڑی کو نشانہ بنانے والے حملہ آوروں کو سخت سزا دی جائے اور پاکستان میں موجود چینی شہریوں، اداروں اور منصوبوں کی حفاظت کو ہر ممکن یقینی بنایا جائے۔

پاکستان نے بس حادثےمیں9چینی باشندوں کی موت کی تصدیق کردی۔ ترجمان دفتر خارجہ نے بتایا  کہ بس حادثےمیں 3 پاکستانی بھی جاں بحق ہوئے۔ بس میں تکنیکی خرابی کےباعث گیس لیکج سے دھماکا ہوا اور بس کھائی ميں جا گری۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ مقامی انتظامیہ زخمیوں کو ہر ممکن مدد فراہم کررہی ہے۔

متعلقہ خبریں