دلوں پرراج کرنے والی رانی کی 28ویں برسی

اداکارہ کینسرکے مرض میں مبتلاتھیں

حقيقت سے قريب تراداکاری اوردلنشين رقص کی وجہ سے اداکارہ رانی ايک عرصے تک ستارے کی مانند فلمی دنيا پر جگمگاتی رہيں، دلوں کو موہ لينے والی اداکارہ کو مداحوں سے بچھڑے 28 برس بیت گئے۔

رانی 8 دسمبر 1946ء کو لاہور میں پیدا ہوئیں، ان کا اصل نام ناصرہ سرفراز تھا۔ بولتی آنکھوں، دلکش جسمانی خدوخال اور رقص میں مہارت رکھنے والی رانی کا کیرئیر 32 سال پرمحیط رہا۔ چاکلیٹی ہیرو وحید مراد کے ساتھ ان کی آن اسکرین کیمسٹری کا ایک زمانہ مداح تھا۔

فلمی دنیا میں 1961ء میں قدم رکھنے والی رانی کو ابتداء میں تو مشکل حالات کا سامنا رہا، ہدایتکار انور کمال پاشا نے رانی کو 1961ء میں فلم محبوب میں ایک مختصر کردار میں متعارف کروایا، 1964ء تک رانی نے فلم موج ميلہ، اک تيرا سہارا اور سفيد خون سميت کئی فلموں میں اداکاری کے جوہر دکھائے جن میں سے اکثر ناکام رہیں، جس کے باعث رانی کو پربدقسمت اداکارہ کا ٹھپہ لگ گیا لیکن 1967 میں فلم “دیوربھابی” کی کامیابی کے بعد ان کی قسمت کا ستارہ چمک اٹھا۔

ہدايتکار رانی کو ليڈنگ کرداروں ميں کاسٹ کرنے لگے، پھر قدرت نے رانی کو ہدایتکار حسن طارق کا ساتھ دیا اور ان کی کامیابیوں کا نہ رکنے والا سلسلہ شروع ہوگيا، فلم اُمراؤ جان ادا، تہذيب، انجمن، ثُريا بھوپالی، دنيا مطلب دی، چن مکھناں، ايک گناہ اور سہی جيسی کامياب فلميں اداکارہ رانی کو شہرت کی بلندیوں پر لے گئيں۔

اداکارہ رانی کو الميہ اور طربيہ دونوں اندازِ اداکاری پر کمال حاصل تھا، ان کا ہر انداز دل ميں اُتر جانے کی راہ جانتا تھا، مکالموں کی ادائیگی اور جذبات کے اظہار کے ساتھ رقص پر بھی مکمل عبور اداکارہ رانی کا خاصہ تھا، اپنے فنی کیریئر میں 90ء کی دہائی ميں يہ خوبصورت اداکارہ چھوٹی اسکرین پر بھی جلوہ گر ہوئیں اور پی ٹی وی کے 2 ڈراموں خواہش اور فريب ميں اپنی اداکاری کے جوہر دکھائے۔

رانی نے 60ء کی دہائی ميں ہدايتکار حسن طارق سے شادی کرلی ليکن حالات نے ساتھ نہ ديا تو جلد ہی دونوں ميں عليحدگی ہوگئی، رانی نے پہلے شوہر سے علیحدگی کے بعد سابق کرکٹر سرفراز نواز سے شادی کی تھی ليکن يہ محبت بھی زيادہ دير نہ چل سکی۔۔

یہ دلکش اور دلفریب اداکارہ 27 مئی 1993ء کو کینسر سے لڑتے لڑتے صرف 46 سال کی عمرمیں زندگی کی بازی ہار گئی ليکن فلم بینوں کے دلوں پر راج کرنے والی رانی کی فلموں میں لازوال اداکاری ان کا نام یادوں سے محو نہیں ہونے دیتی۔

متعلقہ خبریں