راولپنڈی: نالہ لئی آلودہ کرنے پر اب حوالات جانا ہوگا

کمشنر کی سربراہی میں کمیٹی سخت اقدامات کرےگی

راولپنڈی کے نالہ لئی میں گندگی یا ملبے کے ڈھیر پھینکنے والوں پر مقدمہ درج کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا۔

کمشنر راولپنڈی کے سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دے دی گئی ہے جو نالہ لئی میں گندگی پھینکنے والوں کے خلاف قانونی کارروائی کرے گی۔ ایسے عمل کے مرتکب افراد کے خلاف مقدمہ درج ہوگا اور انہیں حوالات کي سير کرنی ہوگی۔

انتظامیہ کے مطابق ہرسال برسات سے قبل کروڑوں روپے کی لاگت سے نالہ لئی کی صفائی کروائی جاتی ہے لیکن نالے میں گندگی اور اطراف میں عمارتی ملبے کے ڈھیر پھینکے جانے کے باعث ساری محنت اور فنڈز رائیگاں چلے جاتے ہیں اور شہر سیلاب کے خطرے سے دوچار ہوجاتا ہے جس کے سبب صفائی کا کام دوبارہ کروانا پڑجاتا ہے جس پر کثیر رقم خرچ ہوتی ہے۔

تاہم اب فیصلہ کیا گیا ہے کہ نالہ لئی کو بند کرکے شہر کو سیلاب کے خطرے سے دوچار کرنے والے افراد کے خلاف قانون حرکت میں آئے گا۔

ترجمان واسا راولپنڈی عمر حیات کا کہنا ہے کہ جن شہریوں کو نالہ لئی کی اہمیت کا احساس ہے وہ تو دوسروں کو بھی اس میں گند پھینکنے سے منع کرتے دکھائی دیتے ہیں تاہم پھر بھی کچھ لوگوں کی لاپراوہی کے باعث ہر سال مسائل کھڑے ہوجاتے ہیں۔

ایک شہری کا کہنا ہے کہ لوگوں کو بھی ذمہ داری کا احساس کرنا چاہیے کہ وہ نالہ لئی می گند نہ پھینکیں اور انتظامیہ کو بھی اپنا کام.کرنا چاہیے تاکہ ایسا کرنے والوں کے خلاف کاروائی ہوسکے۔

انتظامیہ کا کہنا ہے کہ اگر نالہ لئی کی صفائی برقرار رکھی جا سکے تو اس کی صفائی کی مد میں قومی خزانے سے ہر سال لگنے والے کروڑوں روپے بچائے جا سکتے ہیں جبکہ قانون کی خلاف ورزی کی صورت میں بارشوں کے دوران بپھرا نالہ لئی گھروں کے ساتھ اداروں کی کاردگی بھی بہا لے جاتا ہے۔

متعلقہ خبریں