سندھ: ویکسین نہ لگوانے والے ہیلتھ ورکرز کیخلاف کارروائی کااعلان

فوٹو: آن لائن

کرونا ویکسین نہ لگوانے والے ہیلتھ ورکرز کیخلاف محکمہ صحت سندھ نے سخت کارروائی کا اعلان کرديا۔ وزیر صحت سندھ عذرا فضل پیچوہو نے ہیلتھ عملے کیخلاف کارروائی کی ہدایات کردی، ان کا کہنا ہے کہ ویکسین نہ لگوانے والوں کی نوکری جائے گی۔

وزیر صحت سندھ عذرات فضل پیچوہو نے ڈسٹرکٹ ہیلتھ افسران کے ساتھ منعقدہ اجلاس میں کرونا وائرس کی ویکسینیشن کو تعلقہ کی سطح تک بڑھانے کے احکامات جاری کردیئے، انہوں نے بتایا کہ سندھ میں کرونا ویکسین کا مرحلہ تمام اضلاع میں شروع کردیا گیا ہے۔

انہوں نے ویکسین نہ لگوانے والے ہیلتھ عملے کیخلاف کارروائی کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ جو ہیلتھ ورکرز ویکسین مرحلے کا حصہ نہیں ہوں گے ان کو نوکریوں سے فارغ کردیا جائے گا۔

عذرا فضل پیچوہو کا کہنا ہے کہ نیشنل ہیلتھ مینجمنٹ سسٹم کے ساتھ ڈیٹا شیئر کرتے وقت مکمل نگرانی کی جائے، ایسٹرازینیکا ویکسین 60 سال کی عمر سے زائد افراد کو لگائی جائے گی، اس ضمن میں ان افراد کا شناختی کارڈ نمبر رجسٹر کروایا جائے۔

صوبائی وزیر نے محکمہ صحت کے افسران کو ہدایت کہ کہ ویکسین مرحلے کے دوران کسی فرد کو کوئی ردعمل یا شکایات ہونے کی صورت میں طبی امداد دینے کے انتظامات مکمل کئے جائیں۔ اجلاس کو بریفنگ دی گئی کہ سندھ میں سرکاری اور نجی سطح پر ایک لاکھ 98 ہزار 484 ہیلتھ عملے کو رجسٹر کیا جاچکا ہے، جس میں ایک لاکھ 11 ہزار 547 افراد سرکاری جبکہ 86 ہزار 937 نجی سطح پر کام کرنیوالے ہیلتھ ورکرز کو ویکسین کی مفت سہولت دی جائے گی۔

وزیر صحت سندھ نے ویکسین کیلئے مجوزہ کولڈ چین نیٹ ورک کو ہر صورت میں بحال رکھنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ جن علاقوں میں بجلی کی فراہمی میں مسائل ہیں وہاں سولر سسٹم کے انتظامات کئے جائیں۔

اجلاس میں سیکریٹری صحت سندھ ڈاکٹر کاظم جتوئی، ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ ڈاکٹر ارشاد میمن، ای او سی کوآرڈینیٹر فیاض جتوئی نے شرکت کی۔ ویکسین کے سلسلے میں اٹھائے گئے اقدامات سے متعلق ضلعی صحت افسران نے بذریعہ وڈیو لنک بریفنگ دی۔