سینیٹ کا ڈونلڈ ٹرمپ کو مواخذے کی کارروائی میں بری کرنے کے لیے ووٹ

اتوار 14 فروری 2021 0:10

سات ری پبلیکن نے بھی ٹرمپ کو’ قصور وار‘ قرار دینے کے حق میں ڈیموکریٹس کا ساتھ دیا ہے(فوٹو اے ایف پی)

امریکی سینیٹ نے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو مواخذے کی دوسری کارروائی میں بغاوت پر اکسانے کے الزام سے بری کرنے کےلیے ووٹ دیا ہے۔
فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق مواخذے کی کارروائی میں مظاہرین کو بغاوت پر اکسانے کے الزام کے حق میں 57 ووٹ ڈالے گئے ہیں جبکہ 47 سینیٹرز نے’ قصور نہیں‘ قرار دیا۔ مواخذے کے لیے دو تہائی اکثریت ( 67) ووٹ درکارتھے۔
بارہ ماہ میں دوسری مرتبہ ڈونلڈ ٹرمپ مواخذے کی کارروائی میں الزامات سے بری ہوئے ہیں۔ ڈیموکریٹس کو امید تھی کہ انہیں آئندہ صدارتی انتخاب میں حصہ لینے سے روک سکیں گے۔
سینیٹ میں سات ری پبلیکن نے بھی ٹرمپ کو’ قصور وار‘ قرار دینے کے حق میں ڈیموکریٹس کا ساتھ دیا جو ان کی پارٹی کی طرف سے اب تک مواخذے کی کارروائی میں ڈالے گئے سب سے زیادہ ووٹ تھے۔ 
یاد رہے کہ امریکہ کے صدر ٹرمپ کو اپنے دور صدارت کے دوران دوسری مرتبہ مواخذے کی کارروائی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔
اس سے قبل امریکی ایوان نمائندگان میں دس ری پبلیکن سمیت 232 ارکان نے مظاہرین کو’ بغاوت پر اکسانے‘ کے ایک ہی الزام میں دو مرتبہ مواخذے کے حق میں ووٹ دیا تھا جبکہ 197 ارکان نے اس کی مخالفت کی تھی۔
سینیٹ سے مواخذے کی دوسری کارروائی سے بری ہونے کے بعد ٹرمپ نے بیان میں کہا کہ’ ان کی حب الوطنی کی تحریک ابھی شروع ہوئی ہے‘۔
’ امریکہ کو دوبارہ عظیم  بنانے کے لیے ہماری تاریخی، حب الوطنی اور خوبصورت تحریک کی محض ابھی شروعات ہیں‘۔
انہوں نے کہا کہ ’اگلے مہینوں میں مجھے آپ کے ساتھ بہت کچھ شیئر کرنا ہے اور میں اپنے سب لوگوں کے ساتھ اپنا سفر جاری رکھنے کا منتظر ہوں‘۔