شفاف احتساب ہوا تو جہانگیرترین جیل میں ہوں گے،عطاء تارڑ

رہنما ن لیگ عطاء تارڑ کا کہنا ہے کہ حکومتی ترجمانوں کی باتوں سے ایسا لگ رہا ہے جیسے اس حکومت میں کوئی اسکینڈل ہوا ہی نہیں لیکن اگر درست احتساب ہوا تو جہانگیرترین اور خسرو بختیار جیل میں ہوں گے۔

سماء کے پروگرام نیوز بیٹ میں گفتگو کرتے ہوئے رہنما مسلم لیگ ن کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف میں گروپ بندیاں ان کی اندرونی لڑائی ہے مگر جہانگیرترین بھی معصوم نہیں ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وفاقی کابینہ نے چینی برآمد کرکے جان بوجھ کر چینی بحران کو جنم دیا۔

انہوں نے کہا کہ ایک ایک اسکینڈل میں اربوں روپے کی کرپشن ہورہی ہے موجودہ حکومت کا بیانیہ یہی ہے کہ کھاتا ہے تو بتاتا بھی تو ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایئرپورٹ کے قریب کوئی سوسائٹی نہیں بن سکتی مگر غلام سرورخان نے بطور وزیر این او سی لیا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وفاقی وزیر غلام سرور نے مجھے قانونی نوٹس بھیجنے کا اعلان کیا تھا مگر ابھی تک وہ نوٹس مجھے نہیں ملا۔

عطاء تارڑ نے کہا کہ عامر کیانی اور ندیم بابر کو ادویات اور پیٹرول بحران کی وجہ سے وزارتوں سے ہٹادیا گیا مگر کرپشن پر کوئی بازپرس نہیں ہوئی۔

ان کا کہنا تھا کہ نیب اور حکومت کے درمیان شہزاد اکبر ایک پل کا کردار ادا کررہے ہیں اور انہوں نے ملک کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دیا ہے۔

پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے رہنما پیپلزپارٹی ناز بلوچ کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف تبدیلی کا نعرہ لگاتے لگاتے خود تبدیل ہوگئی۔

انہوں نے کہا کہ ان کا ایک نعرہ تھا کہ ہم کرپشن کا حاتمہ کریں گے مگر خیبرپختونخوا میں کرپشن کے ادارے پر تالا لگا دیا۔

نازبلوچ کا کہنا تھا کہ ایک ہی چیز ہے جس میں حکومت آگے بڑھی ہے اور  وہ ہے کرپشن اور یہ ہم نہیں کہ رہے بلکہ عالمی اداروں کی رپورٹ ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت اپنے کھودے گئے گڑھے میں خود پھنس چکی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اپوزیشن رہنماؤں کے نام تو ای سی ایل پر ڈال دیے جاتے ہیں لیکن جہانگیر ترین کےلیے ان کا رویہ مخلتف ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کو عوام نے ضمنی الیکشن میں مسترد کردیا ہے اگر عوام نے ہمیں ووٹ دیا ہے تو انہیں امید ہے کہ اگر کوئی کام کرسکتا ہے تو وہ پیپلزپارٹی ہے۔

پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے رہنما تحریک انصاف شہریار آفریدی کا کہنا تھا کہ پاکستانی قوم نے فلسطین کے معاملے پر جس طرح دنیا کو ایک پیغام دیا ہے وہ لائق تحسین ہے۔

انہوں نے کہا کہ جہانگیرترین کی پارٹی کے لیے بے مثال خدمات ہیں جس کا ہمیں ادرک ہیں لیکن اگر 15 کے بجائے 1500 ایم این ایز کا گروپ بھی بن جائے تو کوئی عمران خان کو بلیک میل نہیں کرسکتا۔

شہریار آفریدی نے کہا کہ عمران خان کسی کو کوئی اضافی ریلیف نہیں دیں گے اور جہانگیرترین صاحب نے خود کہا ہے کہ میں عالت میں اپنے بے گناہی ثابت کروں گا۔

انہوں نے کہا کہ جن لوگوں نے پارٹی مخالف بیانات دیے ہیں وہ پارٹی کی سطح پر دیکھے جائیں گے گلہ شکوہ اپنی جگہ لیکن کسی کو ریلیف نہیں ملے گا۔

رہنما تحریک انصاف نے کہا کہ آج وہ لوگ ہم پر الزامات لگا رہے  ہیں جن کی تمام قیادت اعلیٰ عدالتوں سے سندیافتہ کرپٹ اور بیرون ملک مفرور ہے۔

متعلقہ خبریں