شہباز شريف کو روکنے سے کچھ حاصل نہيں ہوگا،مریم اورنگزیب

وہ آج نہيں تو 2 دن بعد چلے جائيں گے

 

پاکستان مسلم لیگ نون کی ترجمان مريم اورنگزيب نے کہا ہے کہ شہباز شريف کو روکنے سے کچھ حاصل نہيں ہوگا۔ وہ آج نہيں تو 2 دن بعد چلے جائيں گے۔

لاہور میں ہفتہ کی صبح میڈیا سے بات کرتے ہوئے مریم اورنگزیب کا کہنا ہے کہ ایف آئی اے عمران خان کے حکم پر توہین عدالت کررہی ہے۔ایف آئی اے نے شہباز شریف کا نام ایک اور لسٹ میں داخل کردیا ہے اور سسٹم اپ ڈیٹ نہ ہونے کی بنیاد پر انھیں روکے جانا بدنیتی ہے۔ سسٹم اپ ڈيٹ نہ ہونے کا دعویِٰ جھوٹا ہےاورحکومت نے عوام کو اپنی اصليت دکھائی ہے۔

مريم اورنگزيب نے کہا کہ کہ حکومت کی نيت مخالفين کو جيل ميں ڈالنے کے سوا کچھ نہيں ہے۔ قانونی حکم نامہ ہونے کے باوجود کھلےعام توہين عدالت کی گئی ہے۔ شہباز شريف کو روکنے سےعوام کو آٹا اور چينی نہيں ملے گی۔

لیگی رہنما نے مزید کہا کہ شہزاد اکبر سميت وزرا نے کھلے عام عدالتی فيصلے کا مذاق اڑايا ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان مسلم لیگ نون کے صدر شہبازشریف لاہور سے لندن نہ جاسکے۔ امیگریشن حکام نے علامہ اقبال انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر انھیں روک ليا اور آف لوڈ کرکے واپس بھيج ديا۔ جمعہ کی دوپہرلاہور ہائی کورٹ نے شہباز شریف کو علاج کے لیے ملک سے باہر جانے کی مشروط اجازت دی۔اپوزيشن رہنما نے عدالت کو بتایا کہ وہ کينسر کے مريض ہيں اورجب بھی بيرونِ ملک گئے،مقررہ وقت پر واپس آگئے۔عدالت نے شہباز شریف کا نام بلیک لسٹ سے نکالنے کی درخواست پر وفاقی حکومت سے جواب بھی طلب کرلیا۔

متعلقہ خبریں