عبدالستار ایدھی کی پانچویں برسی آج منائی جارہی ہے

خدمت کا پیکر اور دنیا کی سب سے بڑی ایمبولنس سروس کے بانی عبدالستار ایدھی کی پانچویں برسی آج منائی جارہی ہے۔

بابائے خدمت عبدالستار ایدھی نے دنیا کی سب سے بڑی رضاکارانہ ایمبولینس سروس کی بنیاد رکھی، یتیموں کی پرورش اور لاوارثوں کی کفالت کی۔ قدرتی آفات اور حادثات میں فوری مدد کو پہنچنے والے عبدالستار ایدھی 5 سال قبل آج کے روز دنیائے فانی سے کوچ کرگئے تھے۔

عبدالستار ایدھی 1928ء میں بھارتی ریاست گجرات کے شہر بانٹوا میں پیدا ہوئے اور تقسیم ہند کے بعد 1947میں اپنے خاندان کے ہمراہ پاکستان آگئے اور کراچی میں سکونت اختیار کی۔

عبدالستار ایدھی نے اپنی زندگی کے 65برس دکھی انسانیت کی خدمت میں گزارے جس کا آغاز انہوں نے 1951 میں ایک ڈسپنسری قائم کرکے کیا۔ ایدھی صاحب نے اسپتال اور ایمبولینس خدمات کے علاوہ ایدھی فاؤنڈیشن نے کلینک، زچگی گھر، معذوروں کےلیے گھر، بلڈ بینک، یتیم خانے، لاوارث بچوں کو گود لینے کے مراکز، پناہ گاہیں اور اسکول قائم کیے جو آج بھی عوامی خدمت کررہے ہیں۔

معاشرےکا دکھ بانٹنے والےعبدالستار ایدھی کی آج چوتھی برسی

ایدھی صاحب کی قائم کردہ ایدھی فاؤنڈیشن آج بھی دنیا کےکئی ممالک میں انسانیت کی خدمت کے فرائض سرانجام دےرہی ہے۔

سن 1980 کی دہائی میں حکومت پاکستان نے انہیں نشان امتیاز سے نوازا جب کہ پاک فوج نے انہیں شیلڈ آف آنر کا اعزاز دیا اور1992 میں حکومت سندھ نے انہیں سوشل ورکر آف سب کونٹی ننیٹ کا اعزاز دیا۔

بین الاقوامی سطح پر 1986 میں عبدالستار ایدھی کو فلپائن نے رومن میگسے ایوارڈ دیا اور 1993 میں روٹری انٹرنیشنل فاؤنڈیشن کی جانب سے انہیں پاؤل ہیرس فیلو دیا گیا۔

کوئٹہ: عبدالستار ایدھی کا قد آور مجسمہ نصب

بابائے خدمت 8 جولائی 2016 کو گردوں کے عارضے میں مبتلا ہوکر 88 برس کی عمر میں جہانِ فانی سے کوچ کرگئے تھے جن کی خدمات کے اعتراف میں انہیں مکمل سرکاری اعزاز کے ساتھ سپردخاک کیا گیا۔

متعلقہ خبریں