عراق: کروناوارڈ میں آگ لگنے سے 60سے زائد افرادجاں بحق

فوٹو: بی بی سی

عراق کے جنوبی شہر ناصریہ کے ایک اسپتال کے کرونا وارڈ میں آگ لگنے سے 60 سے زائد افراد جاں بحق جبکہ 100 سے زائد زخمی ہوگئے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق عراقی حکام نے آگ لگنے کے واقعے میں 58 افراد کی ہلاکت کی تصدیق کردی، 100 سے زائد زخمیوں کو طبی امداد دی جارہی ہے۔

بی بی سی کے مطابق واقعے میں جاں بحق افراد کی تعداد 60 سے تجاوز کرگئی۔

محکمہ صحت کے ایک اہلکار نے بتایا کہ آگ شارٹ سرکٹ کی وجہ سے لگی۔ ایک اور اہلکار کا کہنا ہے کہ آگ لگنے کی وجہ آکسیجن سلنڈرز کا پھٹنا تھا، ہسپتال کے اس وارڈ میں 70 بستروں کی گنجائش تھی۔

اے ایف پی کے مطابق عراقی اسپتالوں میں گزشتہ 3 مہینوں کے دوران یہ آگ لگنے کا دوسرا واقعہ ہے، آگ لگنے کے بعد اسپتال کے باہر نوجوانوں نے مظاہرہ بھی کیا اور ’سیاسی جماعتوں نے ہمیں جلا کر رکھ دیا ہے‘ کے نعرے لگاتے رہے۔

مقامی انتظامیہ نے ذی قار صوبے کے دارالحکومت ناصریہ میں ایمرجنسی کا نفاذ کر رکھا ہے جبکہ چھٹی پر جانیوالے ڈاکٹروں کو بھی زخمیوں کی مدد کیلئے واپس بلالیا گیا ہے۔

عراقی وزیراعظم مصطفیٰ الکاظمی کے دفتر سے جاری ایک ٹویٹ کے مطابق وزیراعظم نے بھی وزراء اور سیکیورٹی سربراہان کے ساتھ ’آگ لگنے کی وجوہات جاننے کیلئے ایک ہنگامی ملاقات کی ہے‘۔

دفتر سے جاری بیان کے مطابق ذی قار کے محکمہ صحت اور اسپتال کے سربراہ کو تحویل میں لے کر پولیس کی جانب سے ان سے تفتیش کی جارہی ہے۔ وزیراعظم نے جنوبی صوبے کیلئے ہنگامی امداد بھی روانہ کر دی ہے۔

یاد رہے کہ اس سے قبل اپریل میں عراقی دارالحکومت بغداد کے ایک کووڈ اسپتال میں آگ لگنے سے 82 افراد ہلاک جبکہ 110 زخمی ہوگئے تھے۔ اس واقعے میں بھی آگ لگنے کی وجہ آکسیجن سلینڈرز میں ہونیوالا دھماکا تھا۔

متعلقہ خبریں