عزیربلوچ اب پیپلزپارٹی کا رکن نہیں،ماضی میں رہا ہوگا،فیصل کریم

عزیربلوچ سے متعلق اصل حقائق ان کی رہائی کےبعد ہی معلوم ہوسکیں گے

پاکستان پیپلزپارٹی کے رکن اورسابق ڈپٹی اسپیکرفیصل کریم کنڈی نے کہا ہے کہ سیاسی رہنماؤں کی گرفتاری  سیاسی ظلم ہے۔عزیربلوچ سے متعلق اصل حقائق ان کی رہائی کےبعد ہی معلوم ہوسکیں گے۔

منگل کوسماء کے پروگرام نیا دن میں بات کرتےہوئے فیصل کریم کنڈی نے بتایا کہ عزیر بلوچ اب پیپلزپارٹی کا رکن نہیں،ماضی میں رہا ہوگا۔ ان کی ضمانت عدالت میں ہورہی ہے اور ان کے خلاف مہم سیاسی کردارکشی ہے۔

فیصل کریم نے کہا کہ عزیربلوچ کے خلاف اگر کیسز کمزور بنائے گئے تو خورشید شاہ بھی کئی ماہ سے جیل میں قید ہیں اور ان کے خلاف کوئی قابل ذکر کیس بھی نہیں ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ عزیر بلوچ کبھی دبئی میں ہوتے تھے اور کبھی ان کا نام کراچی کے سپر ہائی وے پر سنا گیا، ان کی گرفتاری بھی عجیب طریقے سے ہوئی۔ عزیر بلوچ کی رہائی ہونےکےبعد ہی اصل حقیقت سامنے آئے گی۔

عذیر بلوچ اب تک 11 مقدمات میں بری ہوچکے ہیں۔جن مقدمات سے عزیر بلوچ کو بری کیا گیا ان میں انسداد دہشت گردی عدالت کے مقدمات بھی شامل ہیں۔عزیربلوچ پر تقریباً 100 افراد کے قتل، بھتہ خوری، اغواء برائے تاوان، ناجائزہ اسلحہ سمیت مزید 47 مقدمات زیرالتواء ہیں۔

متعلقہ خبریں