عمارتوں کے بجائے سندھ حکومت گرادیں، مصطفیٰ کمال

سندھ حکومت برائیوں کی جڑ ہے

پاک سرزمین پارٹی کے چئیرمین مصطفی کمال نے سندھ حکومت گرانے کا مطالبہ کردیا ہے۔

کراچی میں بدھ کو صحافیوں سے بات کرتےہوئے مصطفیٰ کمال نے کہا کہ سندھ حکومت برائیوں کی جڑ ہے۔وفاق نے13 برسں میں سندھ حکومت کو 10 ہزار442 ارب روپے دئیےلیکن کراچی کو ایک قطرہ پانی نہ ملا۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان پیپلزپارٹی کے چئیرمین بلاول بھٹو نے کراچی کا پانی کم ہونے پرایک لفظ نہیں بولا۔ عالمی جریدے بلوم برگ کی رپورٹ میں کراچی کا ٹرانسپورٹ نظام بدترین قرار دیا گیا ہے۔ مصطفی کمال نے مزید کہا کہ پاکستان پيپلزپارٹی رشوت لے کر چند لوگوں کو نواز رہی ہے۔

انھوں نے کہا کہ سندھ بھرکےسرکاری ملازمين کی تعداد5لاکھ کےقريب ہے۔ 5لاکھ سرکاری ملازمين کوبجٹ کا58فيصد جارہا ہے۔ 5لاکھ لوگوں کو18ويں ترميم کا فائدہ ہورہا ہے لیکن صحت،پانی کی سہوليات کيلئے بجٹ نہيں ہے۔

مصطفی کمال نے مزید کہا کہ سندھ ميں465ارب روپےتنخواہوں ميں جارہے ہيں اور یہ بجٹ کا 55اعشاريہ5فيصد حصہ ہے۔ سندھ اپنے بجٹ کا58فيصد تنخواہوں اور پنشنزپر خرچ کررہا ہے۔ پنجاب اپنے بجٹ کا13فيصد حصہ تنخواہوں پر خرچ کرتا ہے۔

چئیرمین پی ایس پی نے کہا کہ ملک میں معيشت کی بہتری کی باتیں ہورہی ہیں لیکن عام آدمی کے حالات معلوم کريں تو2 وقت کی روٹی مشکل ہے۔ بچوں کو پڑھانا مشکل اور صحت کی سہوليات دستياب نہيں ہیں۔ بجٹ صرف لفظوں کا ہير پھير ہے۔ بجٹ کے نمبروں پر لوگوں کا اعتبار نہيں رہا ہے۔

متعلقہ خبریں