ملتان میں ریلوے،بس مسافر خطرے میں

دھوکےسےنشہ آورچیزکھلا کرلوٹنے کے واقعات بڑھ گئے

ملتان میں نشہ آورچیزیں کھلا کر مسافروں کو لوٹنے والا نوسر بازگروہ ایک عرصے سے متحرک ہے اور سال بھر کے دوران 300 سے زائد افراد ان کے ہاتھوں اپنا مال و متاع گنوا چکے ہیں۔

ریسکیو 1122 کے مطابق بس اسٹینڈ ہو یا ریلوے اسٹیشن لٹیروں نے ہر جگہ اپنے پنجے گاڑھ رکھے ہیں اور گزشتہ ایک سال کے دوران 300 سے زائد مسافر ایسے ہیں جنہوں نے نہ صرف اپنا سامان اور نقدی کھویا بلکی انہیں طبی امداد دینے کی بھی ضرورت پیش آئی۔

ایسے دھوکے بازوں کا طریقہ کار یہ ہوتا ہے کہ وہ مسافروں سے گھلنے ملنے کے بعد انہیں نشہ آور اشیا کھلاتے ہیں جس کے بعد وہ اپنے ہدف کا سامان، فون و نقدی لے کر فرار ہوجاتے ہیں۔

وہاڑی کا 35 سالہ نوجوان رجب کے ساتھ بھی ایسا ہی کچھ پیش آیا۔ رجب نے سماء کو بتایا کہ وہ وہاڑی سے بس میں آ رہا تھا اس کے برابر میں ایک فرد بیٹھا تھا جس نے باتوں باتوں میں بسکٹ کی پیشکش کی جسے کھانے کے بعد اسے کوئی ہوش نہ رہا اور وہ شخص بیگ اور موبائل وغیرہ سب اپنے ساتھ لے کر وہاں سے غائب ہوگیا۔

سپرنٹنڈنٹ کینٹ کامران کا کہنا ہے کہ ریلوے اسٹیشن اور لاری اڈے پر ایسی شکایات پر پابندی سے ایکشن لیا جاتا ہے اور ملزمان کی گرفتاری کے لئے ٹیمیں بھی تشکیل دے دی گئی ہیں۔

متعلقہ خبریں