نیب کا سعید غنی کو قانونی نوٹس بھیجنے کا فیصلہ

فائل فوٹو

قومی احتساب بیورو ( نیب) کی جانب سے وزیر تعلیم سندھ اور پی پی رہنما سعید غنی کو قانونی نوٹس بھیجنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

نیب کی جانب سے جاری اعلامیہ میں کہا گیا ہے کہ عوام کو گمراہ کرنے پر پی پی رہنما سعید غنی کو لیگل نوٹس بھیجا جائے گا۔ سعید غنی کا حلیم عادل کیس سے متعلق بیان بے بنیاد ہے۔

نیب حکام نے سعید غنی کے کیس ٹرانسفر کرنے کے بیان کو یکسر مسترد کرتے ہوئے کہا کہ کیس اینٹی کرپشن سے نیب ٹرانسفر ہونے کا بیان من گھڑت ہے۔ نیب آرڈیننس کا جائزہ لے گا، جس کی منظوری پارلیمنٹ نے دی۔ نیب اعلامیہ میں حلیم عادل شیخ سے متعلق کہنا تھا کہ پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل شیخ کے خلاف بھی اس وقت انکوائری جاری ہے۔ حلیم عادل شیخ کی انکوائری کے بعد قانون اپنا راستہ خود بنائے گا۔

اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ نیب نے خورشید شاہ اور اعجاز جھکرانی کے مقدمات پر اثر انداز ہونے کی مذمت کی تھی اور سعید غنی کے بیان کا نیب آرڈیننس کی شق 31( اے) کے تحت جائزہ لینے کا فیصلہ کیا تھا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر تعلیم سندھ کو مشورہ دیا تھا کہ وہ نیب آرڈیننس کا مکمل جائزہ لیں، نیب آرڈیننس کی منظوری پارلیمنٹ اور سپریم کورٹ مکمل جائزہ لے چکی ہے۔

واضح رہے کہ آج بروز جمعہ 2 جولائی کو کراچی میں میڈیا سے گفتگو میں سعید غنی نے کہا تھا کہ حلیم عادل شیخ پر زمین پر قبضوں کے الزامات درست ہیں، چیئرمین نیب کہہ دیں پی ٹی آئی رہنما کو گرفتار نہیں کریں گے، حلیم عادل کی گرفتاری کے مطالبے پر مروڑ چیئرمین نیب کو اٹھ رہے ہیں، آپ غلط آدمی سے پنگا لے رہے ہیں، منتظر ہوں نیب مجھے بلائے۔

سعید غنی نے الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ نیب اس ملک کے معزز لوگوں کیساتھ زیادتی کر رہی ہے، نیب کی وجہ سے بے شمار لوگوں نے خود کشیاں کیں۔

متعلقہ خبریں