وزیراعلیٰ سندھ کا طیارہ ڈبلیو 11 بن گیا

فائل فوٹو

وزیراعلیٰ سندھ کا سرکاری طیارہ مراد علی شاہ کی غیر موجودگی میں دیگر رہنماؤں کے زیراستعمال ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔

وزیراعلیٰ سندھ کے بیرون ملک دورے کے دوران ان کے سرکاری طیارے کو بلاول بھٹو، ناصر شاہ، سعيد غنی سميت پيپلز پارٹی کے 7 افراد نے استعمال کیا، جو اس میں سوار ہو دوسرے شہر گئے تاہم تکنيکی خرابی کے باعث طیارے کو ملتان ميں لينڈ کرنی پڑ گئی۔

اپوزيشن ليڈر حليم عادل شيخ نے معاملے پر سول ايوی ايشن سے تفصيل طلب کرلیں۔ حليم عادل شيخ نے الزام لگايا ہے کہ پيپلز پارٹی رہنما طيارے ميں کشمير اليکشن کے ليے پيسے لے کر جا رہے تھے۔ سرکاری طيارے کا يہ استعمال کيسے ہوا۔ سول ایوی ایشن بتائے۔

سماء نے سول ايوی ايشن کو لکھے گئے خط کی کاپی حاصل کرلی۔ سول ايوی ايشن نے جواب ميں لکھا کہ طيارے ميں بلاول بھٹو ، ناصر شاہ، سعيد غنی کے علاوہ جنيد سليم، بابر ممتاز، رحيم نواز اور وزير عباسی بھی سوار تھے۔

طيارہ چار جولائی کو کراچی سے اسلام آباد کے ليے روانہ ہوا تھا۔ پھر تکنيکی خرابی کے سبب طيارے کو ملتان ميں اتارنا پڑا تھا۔

متعلقہ خبریں