وزیر خزانہ کا نیب کے بارے میں بیان من گھڑت اور بے بنیاد ہے: نیب

قومی احتساب بیورو نے ایک بیان میں کہا ہے کہ وزیر خزانہ شوکت ترین کا یہ بیان کہ ’نیب کی وجہ سے بیوروکریسی کام نہیں کر رہی‘ بے بنیاد، من گھڑت اور حقائق کے منافی ہے۔
 بدھ کی رات نیب کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیر خزانہ شوکت ترین نے منگل کو کہا تھا کہ ’نیب کی وجہ سے بیوروکریسی کام نہیں کر رہی۔‘
نیب کی جانب سے وضاحت کی گئی ہے کہ ’اس کے پاس اس وقت 1273 ریفرنسز احتساب عدالتوں میں زیر سماعت ہیں جن کی مالیت تقریباً 1300 ارب روپے ہے۔‘
مزید پڑھیں
’ان میں سے بیوروکریسی کے خلاف مقدمات نہ ہونے کے برابر ہیں مگر اس کے باوجود تواتر کے ساتھ نیب کے خلاف پروپیگنڈا کیا جا رہا ہے جس کا مقصد نیب پر الزام تراشی اور بیوروکریسی کی حوصلہ شکنی کرنا مقصود ہے۔‘
 نیب کے مطابق ’بیوروکریسی کسی بھی ملک کے یئے ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے۔ قومی احتساب بیورو بیوروکریسی کا نہ صرف احترام کرتا ہے بلکہ اس کی خدمات کو قدر کی نگا ہ سے دیکھتا ہے۔‘
’نیب کے چیئرمین جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال اعلٰی عدلیہ سمیت ملک کے مختلف اداروں میں اہم ذمہ داریاں سر انجام دے چکے ہیں، اس لیے وہ بیوروکریسی کے مسائل سے بخوبی آگاہ ہیں۔‘
انہوں نے 2017 میں قومی احتساب بیورو کے چیئرمین کے منصب کی ذمہ داریاں سنبھالنے کے بعد کابینہ ڈویژن اسلام آباد میں وفاقی سیکرٹریز، لاہور میں صوبائی سیکرٹریز سے خطاب کیا۔‘

چیئرمین جاوید اقبال کی قیادت میں نیب نے 2017 سے 2020 تک 502 ارب روپے بلاواسطہ اور بلواسطہ برآمد کیے‘ (فائل فوٹو: نیب آفس)
’چیئرمین نیب نے پشاور میں نہ صرف سیکرٹریز سے خطاب کیا بلکہ ان کے تمام سوالات کے تسلی بخش جوابات دیے جس پر بیوروکریسی نے چیئرمین نیب کا شکریہ ادا کیا۔‘
نیب کے بیان کے مطابق ’ادارے نے 1999سے 2016 تک 286.755 ارب روپے بلاواسطہ اور بلواسطہ برآمد کیے جبکہ جاوید اقبال کی قیادت میں نیب نے 2017 سے 2020 تک 502 ارب روپے بلاواسطہ اور بلواسطہ برآمد کیے۔‘
’نیب کی کارکردگی کو معتبر قومی اور بین الاقوامی اداروں جن میں ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل پاکستان، ورلڈ اکنامک فورم،گلوبل پیس کینیڈا، پلڈاٹ اور مشال پاکستان نے سراہا ہے جبکہ گیلپ سروے کے مطابق 59 فیصد افراد نے نیب کی کارکردگی پر پر اعتماد کا اظہار کیا ہے۔‘