پنجاب لاک ڈاؤن: انٹرسٹی ٹرانسپورٹ کو آدھی سواریوں کے ساتھ دو دن چلنے کی اجازت

کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے پیش نظر لاک ڈاؤن کے دوران پنجاب میں ہفتہ اور اتوار کے روز شہروں کے درمیان چلنے والی ٹرانسپورٹ کو 50 فیصد مسافروں کے ساتھ کام کرنے کی اجازت ہو گی جبکہ ٹرین سروس 70 فیصد مسافروں کے ساتھ جاری رہے گی۔
یہ بات جمعرات کو سیکریٹری پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کی جانب سے جاری ہونے والے نوٹیفکیشن میں بتائی گئی ہے۔
نوٹیفکیشن میں بتایا گیا ہے لاک ڈاؤن  8 سے 16 مئی تک نافذالعمل ہو گا۔ 
نوٹیفکیشن کے مطابق لاک ڈاؤن کے دوران بین الصوبائی اور شہروں کی مقامی ٹرانسپورٹ مکمل طور پر بند رہے گی تاہم رکشہ، ٹیکسیز اور پرائیویٹ گاڑیاں 50 فیصد گنجائش کے ساتھ سفر کی اجازت ہو گی۔
مزید پڑھیں
اسی طرح تمام مارکیٹس، کاروباری ادارے، دفاتر اور دکانیں بند رہیں گی۔
نوٹیفکیشن میں یہ وضاحت بھی کی گئی ہے کہ تمام میڈیکل سٹورز، پیٹرول پمپس، فوڈ ٹیک اویز، بجلی، گیس، ای کامرس، انٹرنیٹ، سیلولر کمپنیز، کال سینٹرز، تندوراورمیڈیا ہاؤسز 24 گھنٹے کھلے رکھنے کی اجازت دی گئی ہے۔
یہ بھی بتایا گیا ہے کہ گروسری سٹورز، جنرل سٹورز، مٹھائی کی دکانیں، بیکریز، گوشت کی دکانیں، چکیاں، فروٹ، سبزی کی دکانیں صبح نو سے شام چھ بجے تک کھل سکیں گی۔
اسی طرح چاند رات بازاروں مہندی، چوڑیوں اور کپڑوں کے تمام سٹالز پر مکمل پابندی ہو گی۔ 

نوٹیفکیشن کے مطابق سنیچر اور اتوار کو انٹرسٹی ٹرانسپورٹ 50 فیصد گنجائش کے ساتھ چل سکیں گی (فوٹو: اے ایف پی)
نوٹیفکیشن کے مطابق تمام ان اور آؤٹ ڈور ریسٹورنٹس پر مکمل پابندی عائد کی گئی ہے، صرف ٹیک اویز کی اجازت ہو گی۔
پنجاب کے وہ اضلاع جہاں کورونا وائرس کی شرح آٹھ فیصد سے زیادہ ہے، وہاں تمام ان اور آؤٹ ڈور شادی کی تقریبات، ریسٹورنٹس اور مزارات پرمکمل پابندی عائد کی گئی ہے۔
نوٹیفکیشن میں بتایا گیا ہے کہ ان میں  اٹک، بہاولپور، بھکر، ڈیرہ غازی خان، فیصل آباد، گوجرانوالہ، حافظ آباد، جھنگ، قصور، خانیوال، خوشاب، لاہور، لیہ، ملتان، مظفرگڑھ، منڈی بہاؤالدین، میانوالی، اوکاڑہ، پاک پتن، راجن پور، راولپنڈی، رحیم یار خان، ساہیوال، سرگودھا، شیخوپورہ اور نارووال کے علاقے شامل ہیں۔

نوٹیفکیشن میں عوام سے ایس او پیز کی پابندی کرنے کی اپیل بھی کی گئی ہے (فوٹو: اے ایف پی)
صوبہ بھر میں تمام سیاحتی مقامات اور سرگرمیوں پر پابندی لگائی گئی ہے۔ تمام پارکس، شاپنگ مالز، ریسٹورنٹس اور پکنک کے مقامات کو بند رکھا جائے گا۔
اسی طرح ہر قسم کے سپورٹس، ثقافتی اجتماعات پر پابندی عائد کی گئی ہے۔ نوٹیفکیشن میں عوام سے ایس او پیز کی پابندی کرنے کی اپیل بھی کی گئی ہے۔