پنڈی رنگ روڈکی تحقيقات 2ہفتوں ميں مکمل ہوجائے گی، وزیراعظم

حکومت مڈل مین کے کردار کو ختم کرنا چاہتی ہے

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اینٹی کرپشن پنجاب کی ٹیم رنگ روڈ منصوبے پر انکوائری کر رہی ہے اور 2ہفتوں میں تحقیقات مکمل ہو جائے گی۔

اتوار 30مئی کو ٹیلی فون پر عوام کے سوالات کے جوابات دیتے ہوئے وزیراعظم نے یقین دہانی کرائی کہ رنگ روڈ کو جیسا ہونا چاہیئے تھا ویسی ہی ہوگا۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مجھے انفارمیشن ملی تھی کہ رنگ روڈ میں فراڈ ہو رہا ہے لہٰذا فوری تحقیقات کروائی۔

وزیراعظم نے کہا کہ بورڈ ہاؤسنگ سوسائيٹيز کی تحقيقات کرے گا اور اس مقصد کے لیے جسٹس عظمت شیخ سعید کی سربراہی ميں کميٹی بنائی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہميں اين آر او دينے کا کہا گيا ہے لیکن حکومت کو خود نااہل کہنے والے پھنس گئے ہيں۔

پاک بھارت تعلقات

پاک بھارت تعلقات پر وزيراعظم نے کہا کہ اقتدار ميں آتے ہی کوشش کی بھارت سے تعلقات بہتر ہوں لیکن اس وقت بھارت سے تعلقات بحال کرنا کشمير سے غداری ہوگی۔ بھارت 5اگست سے پہلے والی صورتحال بحال کر دے ہم مذاکرات شروع کر ديں گے۔

انہوں نے کہا کہ کشمیریوں کے خون پر پاکستان کی تجارت بہتر نہیں کر سکتے۔

پانی کا مسئلہ

پانی کے مسائل پر عمران خان نے جواب دیا کہ صوبوں کے حصے میں پانی میں کمی آرہی ہے جس کے لیے ہم 10ڈیم بنا رہے ہیں، جو ڈیم 50سال پہلے بننے چاہیے تھے وہ اب بن رہے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ پانی کی چوری کی وجہ سے کسانوں تک پانی نہیں پہنچ پاتا اور سندھ حکومت کی ذمہ داری ہے کمزور طبقے کو پانی فراہم کرے۔ صوبوں میں پانی کی منصفانہ تقسیم ہونی چاہیئے۔

کسان اور مہنگائی

کسانوں کی بہتری کے سوال پر وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ہاکستان ميں900نئے اسٹوريج بنا رہے ہيں کیونکہ مڈل مین کے کردار کو ختم کرنا چاہتے ہیں اور کسانوں کی مدد کے لیے ٹیکنالوجی کا استعمال کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ کسانوں کی مدد کرکے ہی ہم مہنگائی پر قابو پاسکتے ہيں اور کسانوں کی مدد کے لیے کسان کارڈ متعارف کرا رہے ہيں۔ پہلی بار کسانوں کو وقت پر پورا پیسہ ملا۔

ہیلتھ کارڈ

ہیلتھ کارڈ سے متعلق وزیراعظم نے کہا کہ سب سے پہلے ہیلتھ کارڈ خیبر پختونخوا میں لائے تھے اور سال کے آخر تک پورے پنجاب میں ہیلتھ کارڈ دیے جائیں گے۔ ہیلتھ کارڈ سے 10لاکھ روپے کا مفت علاج ہوسکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پرائیویٹ سیکٹر اس لیے دیہات نہیں آتا کہ غریب لوگوں کے پاس پیسہ نہیں ہوتا اس لیے پرائیویٹ سیکٹر کو اسپتالوں کی تعمیر کیلئے سستی زمین دیں گے۔

معیشت

عمران خان نے کہا کہ پہلے دن سے قوم کو کہا تھا مشکل وقت سے گزرنا ہوگا اور ہماری سوچ سے زيادہ ہم اوپر گئے ہیں۔ ملک درست سمت میں لگ چکا ہے اور ساڑھے 4فیصد گروتھ ریٹ کا کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا، گروتھ ريٹ بڑھنے سے روزگار ملے گا۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ حکومتی پاليسی کے باعث کئی فصلوں کی ريکارڈ پيداوار ہوئی۔ ہم نے ماضی ميں زراعت پر کوئی توجہ ہی نہيں دی اور اس وقت ملک کے سب سے طاقتور لوگ چينی کے کاروبار سے منسلک ہيں۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ خراب ادارے کو ٹھیک کرنے میں وقت لگتا ہے اس لیے پنجاب پولیس میں ریفارمز ہوں گی جبکہ لينڈ ريکارڈ کو کمپيوٹرائز کر رہے ہيں۔ عوام اپنی شکایات سیٹیزن پورٹل پر بھی درج کروا سکتے ہیں۔

وزیراعظم نے شہریوں کے مسائل حل کرانے کی یقین دہانی بھی کروائی۔

متعلقہ خبریں