چار دہائیوں بعد سب سے بڑا آتش فشاں پہاڑ ’ماونا لوا‘ پھٹ پڑا، تصاویر

امریکی ریاست ہوائی میں دنیا کا سب سے بڑا فعال آتش فشاں پہاڑ ماونا لوا پھٹنے کے بعد سینکڑوں افراد نظارہ دیکھنے جمع ہوئے۔ دور دور تک پھیلے ہوا لاوے زمین پر ایک منفرد پیش کر رہا ہے جسے کیمرے کی آنکھ میں محفوظ کرنے دور دور سے فوٹوگرافر آئے۔ دیکھیے خبر رساں ادارے اے ایف پی کی تصاویر میں

دنیا کا سب سے بڑا آتش فشاں پہاڑ ماونا لوا چار دہائیوں بعد پہلی مرتبہ پھٹا ہے۔

گزشتہ چند ہفتے پہلے ہی پہاڑ کے کسی بھی وقت پھٹنے کی پیش گوئی کی گئی تھی اور ارد گرد علاقہ مکینوں کو مطلع کر دیا گیا تھا۔

آتش فشاں پہاڑ کے پھٹنے سے فی الحال ارد گرد کے علاقوں کو نقصان نہیں پہنچا۔

سائنسدانوں کے مطابق اس مقام پر کئی لاکھوں سال پہلے سے ہی آتش فشانی سرگرمی شروع ہو گئی تھی۔

یہ تاریخی لمحہ دیکھنے لوگ دور دور سے آئے تھے۔

ماونا لوا آخری مرتبہ سنہ 1984 میں پھٹا تھا۔

لاوے کا بہاؤ بگ آئی لینڈ جزیرے کے اہم ہائی وے سے چند میل دور ہے۔

امریکی جیولاجیکل سروے کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں میں 40 فٹ فی گھنٹہ کی رفتار سے آگے بڑھ رہا ہے۔

لاوا ممکنہ طور پر ہوائی کو مشرق اور مغرب سے جوڑنے والے ہائی وے تک پھیل سکتا ہے۔