چاہتاہوں،ہماری فلم انڈسٹری میں نئی سوچ آئے،وزیراعظم

شارٹ فلمز پاکستان میں نئی شروعات ہیں۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ ماضی میں ہم نے اپنی سوچ کے بجائے دوسروں کا کلچر اپنایا۔ دنیا میں آئیڈیاز کو پذیرائی ملتی ہے۔ چاہتا ہوں کہ ہماری فلم انڈسٹری میں نئی سوچ آئے۔

اسلام آباد میں نیشنل امیچیور شارٹ فلم فیسٹیول سے خطاب میں وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ میجر جنرل بابر افتخار سمیت آئی ایس پی آر کو شارٹ فلم فیسٹیول پر خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔ وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری آپ سے بڑی امیدیں ہیں۔ شارٹ فلمز پاکستان میں نئی شروعات ہیں۔ ہمیں فلموں میں پاکستانی کلچر کو اجاگر کرنا چاہیے تھا۔ ملکی فلم فیسٹیول کے پیچھے جانے کی وجہ کہ ہم نے بھارتی کلچر کو اپنا لیا۔ میرا تجربہ ہے کاپی کی نہیں، اوریجنل ویڈیو کی اہمیت ہوتی ہے۔ نصرت فتح علی خان کو فنڈ ریزنگ کیلئے امریکا، برطانیہ ساتھ لے جاتا تھا۔

وزیراعظم نے کہا کہ میں نے ترکی کے صدر رجب طیب اردوگان سے درخواست کی کہ ارطغرل ڈرامہ کی اردو میں پاکستان میں نشر کیا جائے۔ کیونکہ اس سے قبل ہالی ووڈ، بالی ووڈ کی فلموں میں بے حیائی دیکھائی جانے لگی تھی، ایسی فلمیں یہاں بننا شروع ہوگئی تھیں۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ پاکستان میں وہ خوش قسمت انسان ہوں جس نے پورا پاکستان دیکھا ہے، ملک کا سب سے اہم سیکٹر شعبہ سیاحت ہے، بدھ ازم، کرتار پور راہداری سمیت مذہبی سیاحت موجود ہے۔ ہم نے دنیا بھر میں ہر چیز پیدا کرسکتے ہیں، پاکستان میں 12 موسم ہیں جو دنیا میں کہیں نہیں، سیاحت پر خصوصی توجہ دے رہے ہیں۔

بات جاری رکھتے ہوئے وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کہ جو شخص ہارنے سے ڈرتا ہے وہ کبھی نہیں جیتا۔ امریکا کا جنگ میں ساتھ دیا اور ہمیں ہی برا بھلا کہا جاتا رہا۔ حالانکہ ہمیں اس جنگ میں حصہ لینے کی کوئی ضرورت نہیں تھی۔

وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کہ ایک وقت تھا جب روشن خیالی اور اعتدال پسندی کی اصطلاح سافٹ امیج کے فرو کیلئے چلی۔ لیکن مجھے آج تک روشن خیالی اور اعتدال پسندی کی سمجھ نہیں آئی۔ یہاں اعتدال پسندی اور روشن خیالی کا یہ مطلب ہے کہ میں سوٹ پہن لوں اور انگریزی بولوں۔ میں تو اس دور سے بھی گزرا ہوں جب لوگ مجھے طالبان خان کہتے تھے۔ احساس کمتری میں مبتلا شخص دنیا کو کاپی کرتا ہے۔ سافٹ امیج خود اعتمادی اور خود داری سے آتی ہے۔ دنیا اس کی عزت کرتی ہے، جو پہلے خود اپنی عزت کرتا ہے۔ ہم نے سافٹ امیج پروموٹ کرنا ہے تو پاکستانیت پروموٹ ہوگی۔ ہم نے تکنیک اپنائی تو دنیا نے ہمیں فالو کیا۔ چاہتا ہوں کہ ہماری فلم انڈسٹری میں نئی سوچ آئے۔

جديد جنگيں بيانيے کی جنگيں ہيں

وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ ہم نے ماضی میں جس طرح جنگیں لڑیں ان کو صحیح طرح بیان نہیں کیا گیا۔ ریاستوں کے پاس رائے عامہ ہموار کرنے کیلئے میڈیا اہم ذریعہ ہے۔ پچھلے دور میں رائے سازی پر توجہ نہيں دی گئی۔ شارٹ فلم سے نوجوانوں ميں سياسی شعور آئے گا۔ جديد جنگيں بيانيے کی جنگيں ہيں۔

ان کا کہنا تھا کہ اگست میں پی ٹی آئی حکومت کو تین سال پورے ہو جائیں گے، 14 اگست کو پی ٹی وی، ریڈیو پاکستان سمیت سرکاری خبر ایجنسی اے پی پی کو تبدیل کریں گے، ان کو ڈیجیٹلائزڈ کریںگے، ماڈرن ریڈیو لیکر آئیں گے۔ جب کہ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) نے پاکستان میں شارٹ فلم کو نئی جہت بخشی ہے، کیوں کہ ہمیں اندازہ ہے کہ میڈیا ریاست کا اہم ستون ہے۔ اس شعبے میں مزید وسعت پیدا کرنے کیلئے کراچی میں فلم اسکول بنا رہے ہیں۔ وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں نیا پاکستان بنے گا۔

متعلقہ خبریں