چیف الیکشن کمشنرانتخابی اصلاحات میں رکاوٹ ہیں،وفاقی وزرا

فوٹو: آن لائن

وفاقی وزیراطلاعات فواد چوہدری نے چیف الیکشن کمشنر کو انتخابی اصلاحات کی راہ میں رکاوٹ قرار دیدیا۔

وفاقی وزیراطلاعات فواد چوہدری اور وزیرسائنس و ٹیکنالوجی شبلی فراز نے اسلام آباد میں مشترکہ پریس کانفرنس کی، فراد چوہدری نے کہا کہ اپوزیشن کو انتہائی نالائق بچوں پر مشتمل اور چیف الیکشن کمشنر کو انتخابی اصلاحات کی راہ میں رکاوٹ قرار دیتے ہوئے توہین عدالت کی کارروائی کا انتباہ بھی دیا۔

فواد چودری نے کہا کہ الیکشن کمیشن کے دیگر 2 اراکین کو چاہیے کہ وہ چیف الیکشن کمیشن کے فیصلوں پر خود نظرثانی کریں۔ ای وی ایم پر ای سی پی کے اعتراضات کو الیکشن کمیشن کی اپنی ناکامی ہے۔

وزیرسائنس و ٹیکنالوجی شبلی فراز نے کہا کہ الیکٹرونک ووٹنگ مشین (ای وی ایم) کے استعمال کا معاملہ 2028 تک کھینچنے میں کامیاب نہیں ہونے دینگے۔

وفاقی وزراء کا یہ بھی کہنا تھا کہ الیکشن اصلاحات ہوں یا کیوی ٹیم کا دورہ منسوخ ہونے کا معاملہ اپوزیشن کو اپنے کیسز اور این آر او کےعلاوہ کچھ نہیں سوجھتا۔

دوسری جانب مسلم لیگ نون کی ترجمان مریم انگزیب نے الیکشن کمیشن سے وفاقی وزراء کو سزا دینے کا مطالبہ کی، انہوں نے کہا کہ چیف الیکشن کمشنر کیخلاف ارکان کو اکسانا آئین سے غداری اور اداروں پر حملہ ہے، عمران خان کےحکم پر الیکشن  کمیشن کو بلیک میل کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ الیکشن کمیشن اور ارکان پارلیمنٹ کے سوالات کےحکومت کے پاس جواب نہیں، عمران صاحب غیر قانونی فارن فنڈنگ سے نجات کیلئے الیکشن کمیشن پر دباؤ ڈال رہے ہیں۔