ژوب کے لیے پروازوں کی بحالی، ’عرب ممالک کے مسافروں کو فائدہ ہوگا‘

بلوچستان کے ضلع ژوب کے لیے پی آئی اے کی پروازیں تین سال بعد بحال کردی گئیں۔ کراچی سے پاکستان انٹرنیشنل ائیرلائن کی پہلی پرواز 41 مسافروں کو لے کر ژوب پہنچ گئی۔
ژوب سے تعلق رکھنے والے بلوچستان کے وزیر ماحولیات مٹھا خان  کاکڑ، منیجر پی آئی اے بلال احمد اور سٹیشن منیجر ژوب ایئرپورٹ عبدالشکور اور دیگر حکام نے پہلی پرواز کے مسافروں کا استقبال کیا۔
پروازوں کی بحالی سعودی عرب، متحدہ عرب امارات اور دیگر عرب ممالک میں مقیم ژوب کے باشندوں کا دیرینہ مطالبہ تھا۔ 
مزید پڑھیں
پی آئی اے ژوب کے ڈسٹرکٹ سیلز منیجر اسلم شاہ کاکڑ نے اردو نیوز کو بتایاکہ کراچی سے ژوب اور ژوب سے کراچی تک دونوں طرف کی پرواز کے لیے تمام ٹکٹ پہلے ہی فروخت ہوگئے تھے۔
ان کا کہنا تھا کہ ژوب اور کراچی کے درمیان پی آئی اے کی دو طرفہ پروازیں ہفتے میں دو دن ( منگل اور جمعہ کو) چلیں گی۔ حکومت نے مسافروں کے لیے رعایتی کرایے مقرر کر رکھے ہیں۔
اسلم شاہ کاکڑ کے مطابق ژوب ایئرپورٹ پر بڑے طیارے اتر نہیں سکتے اس لیے جیٹ انجن اور 48 نشستوں والے چھوٹے اے ٹی آر طیارے استعمال کیے جا رہے ہیں۔
انہوں نے بتایا کہ طیاروں کی کمی کی وجہ سے 2018 میں پی آئی اے نے ژوب  کے لیے پروازیں بند کردی تھیں جس کے بعد سے ایئرپورٹ بھی غیر فعال ہوگیا تھا۔
بلوچستان اسمبلی نے بھی کئی بار قراردادیں منظور کرکے ژوب ایئرپورٹ کی بحالی اور پروازیں دوبارہ شروع کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

پروازوں کی بحالی عرب ممالک میں مقیم ژوب کے باشندوں کا دیرینہ مطالبہ تھا۔ (فوٹو: پی آئی اے)
ژوب سے پروازوں کے دوبارہ آغاز پر علاقے کے عوامی نمائندوں اور لوگوں نے خوشی کا اظہار کیا ہے۔
ژوب سے رکن صوبائی اسمبلی اور صوبائی وزیر ماحولیات مٹھا خان کاکڑ کا کہنا ہے کہ ’ژوب اور اس سے ملحقہ ضلع شیرانی سے تعلق رکھنے والے افراد کی ایک بڑی تعداد روزگار اور کاروبار کی غرض سے متحدہ عرب امارات، سعودی عرب سمیت دیگر عرب ممالک میں بستے ہیں۔ پروازوں کی بندش سے ان کو مشکلات کا سامنا تھا اور وہ ژوب سے اسلام آباد، کراچی اور کوئٹہ تک طویل سفر سڑک کے ذریعے کرنے پر مجبور تھے۔ پروازوں کی بحالی سے مسافروں، مریضوں اور عام لوگوں کوفائدہ پہنچے گا۔‘  
پی آئی اے کے ڈسٹرکٹ سیلز منیجر اسلم شاہ کاکڑ کے مطابق اب کراچی سے ژوب تک ایک ہزار کلومیٹر سے زائد کا فاصلہ صرف دو گھنٹے میں طے کیا جاسکے گا۔