کراچی: بھینس پر فائرنگ کا واقعہ، 9افراد زیر حراست

بھینس کو نڈھال ہونے پر ذبح کیا گیا، مالک

Your browser does not support the video tag.

کراچی کی یونیورسٹی ہاؤسنگ سوسائٹی میں بھینس پر فائرنگ کرنے کے واقعے میں سیکیورٹی گارڈ سمیت 9افراد کو حراست میں لے لیا گیا۔

ڈی آئی جی ايسٹ کے نوٹس پر سچل پولیس کی جانب سے کارروائی کی گئی جبکہ فوٹيج کی مدد سے مزيد افراد کی تلاش جاری ہے۔

پولیس کے مطابق زیر حراست افراد سے ایک رائفل بھی قبضے میں لی گئی ہے جبکہ مزید افراد کی تلاش جاری ہے۔

واضح رہے کہ عید الاضحیٰ کے پہلے روز بھینس کی قربانی کے دوران قصائیوں کے ہاتھ سے بھینس بھاگ گیا جسے پکڑنے کی کوشش کی گئی تاہم بھینس نہ پکڑا گیا۔

يونيورسٹی کيمپس سيکيورٹی آفيسر کے مطابق بھینس قابو نہ آیا تو سوسائٹی گارڈز نے فائرنگ کر دی جس سے بھینس زخمی ہوگیا۔

جانی اور مالی نقصان سے بچنے کے لیے کراچی یونیورسٹی ہاؤسنگ سوسائٹی کا مرکزی گیٹ بھی بند کرنا پڑا۔

مالک کا کہنا ہے کہ بھینسا حیدرآباد سے خریدا تھا اور پانچ دن سے سکون سے باندھا ہوا تھا لیکن قربانی کے وقت لوگوں کے شور سے بدکا۔

مالک کا کہنا تھا کہ پولیس کی مدد کے بغیر رہائشی سوسائٹی کی سیکیورٹی گارڈز کی فائرنگ سے بھینس قابو میں آیا اور نڈھال ہونے کے بعد اسے ذبح کیا گیا۔

متعلقہ خبریں