کرپشن سے ترقی ہوتی تو سندھ کیلیفورنیا بن چکا ہوتا،حماداظہر

پیپلزپارٹی کےدورمیں بی آئی ایس پی میں سرکاری افسران پیسےلےرہےتھے

پی ٹی آئی رکن قومی اسمبلی حماد اظہر نے کہا ہے کہ کرپشن سے ترقی ہوتی تو سندھ کیلی فورنیا بن چکا ہوتا۔

جمعہ کو قومی اسمبلی میں بجٹ سیشن سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی آئی رکن قومی اسمبلی حماد اظہر نے کہا کہ سياست ميں ايسے لوگ آتے ہيں جنہوں نےزندگی ميں کوئی کام نہيں کيا تاہم ہم عوام کے ووٹ لے کرآئے ہیں اور 10 یا 20 فیصد پر نہیں آئے۔ ایک لاکھ 60 ہزار گھرانوں کو احساس پروگرام میں لائے ہیں جبکہ پیپلزپارٹی کے دور میں بی آئی ایس پی میں سرکاری افسران پیسے لے رہے تھے۔

حماد اظہر نےبتایا کہ مہنگائی کی شرح ساڑھے آٹھ فیصد اور تنخواہیں دس فیصد بڑھائی گئی ہیں۔ پیپلزپارٹی کے دورمیں مہنگائی زیادہ ہونے کی وجہ سے تنخواہیں بھی زیادہ بڑھاتے تھے۔ انھوں نے کہا کہ دنیا میں اس وقت سب سے سستا تیل پاکستان میں ہے۔نون لیگ 56 فیصد تک سیلز ٹیکس لے کر گئے جبکہ پی ٹی آئی حکومت نے 70 فیصد پر رکھا۔انھوں نے کہا کہ پاکستان کے بجلی کے ٹیرف میں دونوں سلیب کے سب سے کم ریٹ ہیں۔

پیپلزپارٹی اور بلاول بھٹو پر مزید تنقید کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی امریکہ کو کہتی تھی کہ ڈرون مارتے جاؤں اور لوگ مرتے ہیں تو ہم مذمت کرتے جائیں گے۔قومی اسمبلی میں بلاول نے عوام کی بات انگریزی میں اور امریکہ کو اڈے نہ دینے کی بات اردو میں کی ہے۔ کرپشن سے ترقی ہوتی تو سندھ کیلی فورنیا بن چکا ہوتا۔

انھوں نے مزید بتایا کہ آج حکومت کا 800 ملین ڈالر کرنٹ اکاؤنٹ پلس میں ہے۔ اپوزیشن کرونا میں افراتفری چاہتی تھی لیکن حکومت نے اعداد وشمار کے مطابق حکمت عملی بنائی۔پچھلی حکومت کسان کو پوری قیمت نہیں دیتی تھی لیکن موجودہ حکومت نے کسان کو پوری قیمت دی اور فائدہ پہنچایا۔ بجٹ سے متعلق ان کا مزید کہنا تھا کہ پاور سیکٹر میں 400 ارب روپے اضافی دینا پڑے جبکہ بجٹ میں 100 ارب بجلی کے ترسیلی نظام کے لئے رکھے ہیں۔ اس کے علاوہ کراچی کو 550 میگاواٹ روزانہ کی بنیاد پر بجلی دی جارہی ہے۔ملک میں پناہ گاہ اور لنگر خانوں کا ایک جال بچھانے جارہے ہیں۔

متعلقہ خبریں