یورپی یونین کی ممکنہ پابندی، یورپی تاجروں نے روسی ڈیزل ذخیرہ کرنا شروع کر دیا

یورپی یونین 5 فروری تک روسی پیٹرولیم مصنوعات پر پابندی عائد کرے گا۔ فوٹو: اے ایف پی

یورپی یونین کی جانب سے ممکنہ پابندی اور محدود متبادل ذرائع کے پیش نظر تاجروں نے روسی ڈیزل ذخیرہ کرنا شروع کر دیا ہے۔
خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق یورپی یونین 5 فروری تک روس سے درآمد ہونے والی پیٹرولیم مصنوعات پر پابندی عائد کر دے گا جن میں سب سے زیادہ انحصار ڈیزل پر کیا جاتا ہے۔
جبکہ روسی خام تیل کی درآمد پر رواں سال دسمبر تک پابندی عائد کی جائے گی۔
مزید پڑھیں
برطانوی کمپنی وورٹیکسا کی سینیئر منیجر پامیلا منگر کا کہنا ہے کہ اکتوبر کے مقابلے میں یکم سے 12 نومبر کے درمیان یورپ میں ذخیرہ کیے جانے والے روسی ڈیزل کی مقدار میں 126 فیصد اضافہ ہوا ہے۔
نومبر کے اعداد و شمار کا جائزہ لیا جائے تو یورپ کی جانب سے گاڑیوں میں استعمال ہونے والے درآمد شدہ ایندھن میں سے 44 فیصد روسی ڈیزل تھا جبکہ اکتوبر میں یہ 39 فیصد تھا۔
رواں سال فروری میں یوکرین پر حملے سے پہلے ہی یورپ کا روسی ایندھن پر انحصار 50 فیصد سے زیادہ کم ہو گیا تھا تاہم ابھی بھی یورپ کو ڈیزل سپلائی کرنے والا سب سے بڑا ملک روس ہے۔
معاشی تجزیہ کار یوجین لنڈل کا کہنا ہے کہ روس کا متبادل تلاش کرنے کی صورت میں یورپی یونین کو تقریباً 500-600 بیرل ڈیزل یومیہ ذخیرہ کرنا پڑے گا جو امریکہ، مشرق وسطیٰ اور انڈیا سے درآمد کیا جا سکتا ہے۔